……جو بچے پھلوں کے جوس پیتے ہیں ان کو اس بیماری کا خطرہ

عام تاثر ہے کہ پھلوں کا جوس بچوں کے لیے انتہائی صحت بخش ہوتا ہے لیکن اب سائنسدانوں نے اس تاثر کے برعکس ایسا انکشاف کر دیا ہے کہ والدین اپنے بچوں کو پھلوں کا جوس دینا بندکر دیں گے۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق ہارورڈ یونیورسٹی کے سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ ”جو بچے کم عمری سے ہی باقاعدگی سے پھلوں کا جوس پینا شروع کر دیتے ہیں ان کو دمہ کا مرض لاحق ہونے کے امکانات 79فیصد بڑھ جاتے ہیں۔ اس کے علاوہ جو مائیں دوران حمل سوڈا اور دیگر میٹھے ڈرنکس پئیں ان کے ہاں پیدا ہونے والے بچوں میں بھی دمہ ہونے کا خطرہ 70فیصد زیادہ ہوتا ہے۔“

اس تحقیق میں سائنسدانوں نے ایک ہزار ماﺅں اور ان کے بچوں کی غذائی عادات اور طبی ڈیٹا کا تجزیہ کرکے نتائج مرتب کیے ہیں۔معاون تحقیق کار شیریل ریفاس شیمن کا کہنا تھا کہ ”ماضی میں کی جانے والی تحقیقات میں یہ معلوم ہو چکا ہے کہ میٹھے مشروبات موٹاپے کا باعث بنتے ہیں لیکن ہماری تحقیق میں اس کا دمے جیسی موذی بیماری لاحق ہونے جیسا خطرناک نقصان بھی سامنے آیا ہے۔ہماری تحقیق میں ثابت ہوا ہے کہ پھلوں کا جوس بچوں میں موٹاپے کے ذریعے بھی دمہ کا باعث بنتا ہے اور براہ راست بھی دمہ کی بیماری کو بڑھاوا دیتا ہے۔ اس کا اصل سبب تو معلوم نہیں ہوسکا تاہم میں یقین سے کہہ سکتی ہوں کہ ایسے مشروبات بچوں کے جسم میں انفلیمیشن کو بڑھاتے ہیں جس سے ان کے پھیپھڑوں کی نشوونما متاثر ہوتی ہے اور انجام کار وہ دمے کے مریض بن جاتے ہیں۔“