نامور سائنسدان اور پاکستان اٹامک انرجی کمیشن کے سابق سربراہ اشفاق احمد انتقال کر گئ

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن) نامور پاکستانی سائنسدان اور حکومت پاکستان کے سابق سائنسی مشیر اشفاق احمد انتقال کر گئے، وہ ایٹم بم کے ابتدائی ڈیزائن کے تخلیق کاروں میں بھی شامل تھے،بطور ڈائریکٹر پاکستان اٹامک انرجی  کمیشن آپ نے 1998 میں پاکستان کے ایٹمی پروگرام کی نگرانی بھی کی۔

پاکستان اٹامک انرجی کمیشن کے ترجمان کے مطابق نامور پاکستانی سائنسدان پروفیسر اشفاق احمد انتقال کی تصدیق کر گئے ہیں ، تین نومبر 1930 کو بھارتی پنجاب کے شہر گورداس پور میں پیدا ہونے والے اشفاق احمد نے پارٹیکل فزکس کے شعبے میں گراں قدر خدمات انجام دیں اور 1960 اور 1970 کے عشرے میں بین الاقوامی سائنسی ادارے سرن میں بطور سینئر تحقیقی سائنسدان کے کوائنٹم الیکٹرو ڈائنامکس کے شعبے میں بھی اپنا لوہا منوایا۔اس ادارے نے ہی 1971 کی جنگ کے بعد کلینڈسٹائن پراجیکٹ کے ذریعے پہلے ایٹمی بم کا ڈیزائن تیار کیا تھا، اس پراجیکٹ میں اشفاق احمد نے فزکس اور حساب کے شعبے میں اہم کردار ادا کیا تھا۔اشفاق احمد نے 1950 کی دہائی کے آخری حصے میں پاکستان اٹامک انرجی کمیشن (پی اے ای سی) میں شمولیت اختیار کی اور نیوکلیئر فزکس ڈویڑن کے خفیہ ادارے پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف نیوکلیئر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی (پنس ٹیک) کے ڈائریکٹر کے طور پر فرائض انجام دیئے ۔

پروفیسر اشفاق احمد 1960 ءکے بعد آپ انٹرنیشنل اٹامک انرجی ایجنسی میں پاکستان کی نمائندگی کرتے رہے اور آپ نے 1991 سے لے کر 2001 تک پاکستان اٹامک انرمی ایجنسی کے سربراہ کے طور پر فرائض بھی انجام دیے۔نیوکلیئر توانائی کو پرامن مقاصد کے لیے استعمال کرنے میں اہم کردار ادا کرنے پر آپ نے 1998 میں عوامی اور بین الاقوامی سطح پر شہرت حاصل کی۔بطور ڈائریکٹر پاکستان اٹامک انرمی کمیشن آپ نے 1998 میں پاکستان کے ایٹمی پروگرام کی نگرانی بھی کی۔